top of page

نوجوانوں کو بنیاد پرست بنانے کے لیے قرآن کی غلط تشریحوادی کشمیر میں

(اگر کوئیایک انسان کو قتلکرتا ہے تو گویااس نے تمام لوگوں کو قتل کیااور اگر کسی نےایک جان بچائی توگویا اس نے تمامانسانوں کی جان بچائی) - القرآن 5:32



پرلوگ پچھلی دو دہائیوں کےدوران پوری دنیا میںبنیاد پرستی ایک اہمچیلنج کے طور پرتیار ہوئی ہے اوراسے دہشت گردی

کیسب سے بڑی وجہقرار دیا گیا ہے۔بنیاد پرستی سے مرادایک ایسا عمل ہےجس کے ذریعے ایکفرد یا افراد کاایک گروہ سیاسی، سماجی یا مذہبی نظریے کی مخالفت میںتیزی سے بنیاد پرستنظریات کو اپنانے کےلیے آتا ہے۔ یہایک پیچیدہ اور انتہائی انفرادی عمل ہےجس کا تعین مختلف ساختی اور انفرادی عوامل کے باہمی تعامل سے ہوتاہے اور اس طرحاس کی تمام حرکیات میں قطعی طورپر گرفت کرنا بہتمشکل ہے۔ دہشت گردیسے نمٹنے کے لیےموثر طریقے اور ذرائع تیار کرنے کےلیے بہت سے اقدامات کیے گئے ہیںلیکن بنیاد پرستی کامقابلہ کرنا اب بھیایک بہت بڑا چیلنج ہے۔ بنیاد پرستی کو زیادہ ترایک نظریے سے تقویت ملتی ہے، اسطرح اب تک بنیاد پرستی پر قابوپانے کے لیے جوحرکیاتی اقدامات کیے گئےہیں وہ مثبت نتائج برآمد کرنے میںناکام رہے ہیں۔ہندوستانی تناظر میں بنیاد پرستی۔


ہندوستانی تناظر میں، بنیاد پرستی کا مسئلہ نسبتاً ایک نیا رجحان ہے اور دانشوروں کا ایک طبقہموجود ہے، جو اسےسنجیدہ غور و فکرکا مسئلہ نہیں سمجھتا۔ یہ استدلال کیاجا رہا ہے کہجہاں برصغیر کے دیگرممالک یعنی پاکستان، افغانستان، بنگلہ دیش اورمالدیپ نے اسلامی بنیاد پرستی کی لعنتکو روکنے کے لیےجدوجہد کی ہے، وہیںہندوستانی مسلم کمیونٹی پرتشدد انتہا پسندی کے خلاف کافیحد تک مزاحم دکھائی دیتی ہے۔ اسبات کی نشاندہی کیگئی ہے کہ کئیدہائیوں کے دوران بہتکم ہندوستانی مسلمانوں نےافغانستان میں القاعدہ اور طالبان میںشمولیت اختیار کی ہے،اور دولت اسلامیہ عراقو شام (ISIS) میں شامل ہونےوالوں کی تعداد دیگرممالک کے مقابلے میںکافی کم ہے۔ مسلمانوں کی آبادی بہتکم ہے۔


یہ باتقابل ذکر ہے کہجموں و کشمیر سےباہر شاید ہی کوئیہندوستانی مسلمان رہاہو جس نے علیحدگی کی تحریک کیحمایت کی ہو۔ ہندوستانی مسلمانوں کی اسموروثی لچک کو اکثرقومی مقصد کے لیےان کی مضبوط وابستگی اور حب الوطنی کی علامت کےطور پر سراہا جاتارہا ہے۔ ہندوستان میںاسلام پسند بنیاد پرستی کو پکڑنے میںناکامی کے لئے جندیگر وجوہات کا حوالہ دیا گیا ہےان میں ہندوستانی مسلمانوں کا اسلامی ریاست پاکستان کو مسترد کرنے اور ایکسیکولر ملک کے حصےکے طور پر ہندوستان میں رہنے کاپیشگی فیصلہ بھی شاملہے، جس سے یہظاہر ہوتا ہے کہتقسیم کرنے والا سیاسی پیغام گونجتا نہیںہے۔ ہندوستانی مسلمانوں کےساتھ مزید ایشیا میںمسلم ریاستوں کی ناکامی، خود کو خوشحال ریاستوں اور مربوط معاشروں کے طورپر تیار کرنے میں،ہندوستانی مسلمانوں کےلیے ایک قابل عملآپشن کے طور پرموجود نہیں ہے۔ اسکے علاوہ، سلفی-وہابی نظریاتی تحریک جس میںالقاعدہ اور آئی ایسآئی ایس جیسے زیادہ تر عالمی جہادی رکن ہیں، بنیادی طور پر سنیاسلام کے حنفی مکتبکی مخالفت کرتی ہےجس کی پیروی ہندوستان میں مسلمانوں کیاکثریت ہے۔ لہٰذا، انگروہوں کے دہشت گردیکے پیغام کو ہندوستان میں بہت کممذہبی روایت ملتی ہے۔یہاں تک کہ سنیاہل حدیث کے ہندوستانی پیروکار بھی ملکمیں اپنے رجحان کےاعتدال پسند طرز پرعمل پیرا ہیں۔




اس نظریاتی فرق کو سلفیوہابی عالمی دہشت گردنیٹ ورکس کی ملکمیں زیادہ حمایت حاصلکرنے میں ناکامی کیوجہ قرار دیا گیاہے۔ مذکورہ پہلوؤں اوردیگر ممالک کے مقابلے میں جہادی بنیاد پرستی کی نسبتاً کم سطح کیبہت سی دیگر وجوہات سے قطع نظر،اس بات سے انکار نہیں کیا جاسکتا کہ حالیہ دنوںمیں ملک میں اسلام پسند بنیاد پرستی نے رفتار پکڑنی شروع کردی ہے۔اس طرح ہندوستان کیجامع سماجی اخلاقیات کےنام پر آرام کرنابے معنی ہے، بلکہیہ ضروری ہے کہابھرتے ہوئے خطرے کامقابلہ کرنے کے لیےایک ساتھ کام کیاجائے۔


اسلام - امن کامذہب اسلام امن وسلامتی کا مذہب ہےاور یہ دوسروں کوامن اور تحفظ کیراہ پر چلنے کیتلقین کرتا ہے۔ متذکرہ بالا بیان کاسب سے اہم ثبوتخود ’’اسلام‘‘ کے نام میں ہےجو عربی لفظ ’’سلام‘‘ سے ماخوذ ہے جس کامطلب امن، سلامتی، حفاظت اور تحفظ ہے۔ایک مذہب کے طورپر، اسلام امن کااوتار ہے اور پوریانسانیت کو اعتدال پسند، امن پسند، مہربان، متوازن، روادار، صبراور تحمل سے کاملینے کی ترغیب دیتاہے۔ اسلام کی تعلیمات کو اللہ کےآخری رسول صلی اللہعلیہ وسلم نے قرآنو حدیث کے ذریعے پھیلایا ہے۔ اسلام، رواداری کا مذہبہے، انسانی روح کوبہت زیادہ عزت دیتاہے، اور بے گناہانسانوں پر حملے کوگناہ کبیرہ تصور کرتاہے۔ اس بیان کیتائید ایک قرآنی آیتسے بھی ہوتی ہےجس میں لکھا ہےکہ ’’جس نے کسی انسان کو قتل وغارت گری یا زمینمیں فساد پھیلانے کےعلاوہ کسی اور وجہسے قتل کیا توگویا اس نے تمامانسانوں کو قتل کردیا اور جس نےکسی ایک کی جانبچائی، اس نے گویاکسی انسان کو قتلکیا۔ گویا اس نےپوری بنی نوع انسان کی جان بچائی‘‘ (قرآن 5:32)۔


HERO OF KASHMIR ISLAM IN KASHMIR

ایرانی انقلاب سے لے کر 9/11 کے حملے تک، اسلام کے نام پرعسکریت پسندوں کی عالمی دہشت گردی کیمسلسل کارروائیوں کے ساتھ، مذہبی انتہا پسندی، تشدد، خودکش بمدھماکے اور دہشت گردیسے اسلام کے تعلقکے حوالے سے سوالات اٹھائے گئے اورالزامات لگائے گئے۔ اسلام کا انتہا پسندی اور دہشت گردیسے تعلق موجودہ دورمیں نازک ہے۔ عالمی دہشت گردی کیبنیادی وجہ، اکثر سیاسی اور معاشی شکایات، بعض اوقات انتہاپسندوں کی طرف سےمذہبی زبان اور علامت کے استعمال سےچھپ جاتی ہیں۔


قرآن - اسلام کامقدس کتاب قرآن، اسلام کا مقدس صحیفہ، پیغمبر اکرم (ص) پر مغربی عرب کے شہروں مکہ اور مدینہ میں نازل ہوا۔کلاسیکی عربی کی ابتدائی شکل میں مشتمل قرآنی نسخہ، روایتی طور پر خداکی تقریر کا لفظینقل مانا جاتا ہے۔قرآن اسلامی قانون کیبنیاد بناتا ہے اوربہت سی قانونی تفصیلات صحیفے کے ساتھساتھ نبی اکرم صلیاللہ علیہ وسلم سےمنسوب قول اور فعلسے اخذ کی گئیہیں۔ اسلامی روایت نےایک بھرپور اور نفیسادب تیار کیا ہے۔سب سے پہلے، تنگمعنی میں قرآنی تفسیر ہے، جو وقفشدہ تفسیروں پر مشتمل ہے جو صحیفے کے متن کواس کے قائم کردہترتیب کے مطابق، یاتو آیت بہ آیتیا قطعہ قطعہ۔ اسطرح کے ترجمے کو 'تفسیر' کہا جاتا ہے، جوصحیفہ کی تشریح کیسرگرمی کا لفظ بھیہے۔ دوسرا، قرآنی آیاتاور ان کی تفسیر دیگر ادبی اصناف میں بھی شاملہے، جیسے کہ قانونی اور نظریاتی گفتگو، جن کے مصنفین اکثر اپنے دعووں کو صحیفہ کےثبوت کے ذریعے ثابتکرتے ہیں۔ قدیم زمانے میں، قرآن کیاسلامی تفسیریں علمی مضامین کی مکمل تشریح کی روشنی میںصحیفے کے متن کیجانچ کرتی تھیں، خاصطور پر عربی گرامر، لغت اور بیانیہ کے شعبے تھے،جن میں نویں صدیسے بہت سی قرآنی تفسیریں ملتی تھیں۔ ایک واضح فلولوجیکل معیار کے بعد۔بہت سے پہلے کیجدید اسلامی تفسیر کیدوسری خصوصیت اس کارجحان ہے، جس کااوپر ذکر کیا جاچکا ہے، بہت سیآیات اور آیات کےجھرمٹ کو نبی اکرمصلی اللہ علیہ وسلمکی زندگی کے واقعات کے اضافی صحیفاتی بیانات کے ساتھجوڑنا ہے۔ تیسرا، اسطرح


قرآن کیاسلامی تفسیریں عام طورپر کسی آیت کیمتبادل وضاحت کا موازنہ اور وزن کرتیہیں، اس طرح یہتسلیم کرتی ہے کہبہت سے صحیفوں کیایک سے زیادہ قابلتعبیر تشریحات ہیں۔ جدیداسلامی تفسیر عام طورپر مصر کی تفسیر سے شروع ہوتیہے جسے 'منار تفسیر' بھی کہاجاتا ہے۔ اس کامنے موجودہ دور میںبھی اخلاقی رہنمائی فراہم کرنے کے لیےقرآنی علم کی صلاحیت پر بہت زیادہ زور دیا ہے۔تازہ ترین تفسیر جوکہ وجود میں آئی1960 کی دہائی کے آخرمیں حکمرانی کے ایک 'اسلامی نظام' کے انقلابی نفاذکا مطالبہ کیا گیاتھا لیکن گہری ادبیحساسیت سے بھی ممتاز ہے۔قرآن کی غلطتشریح قرآن کے نزولپر مبنی تدریسی دورکا مطالعہ مواد کیاس کے ہدف کےمطابق ہونے کی بنیاد پر دلچسپ ہوجاتا ہے ایرانی انقلاب سے لے کر 9/11 کے حملے تک، اسلام کے نام پرعسکریت پسندوں کی عالمی دہشت گردی کیمسلسل کارروائیوں کے ساتھ، مذہبی انتہا پسندی، تشدد، خودکش بمدھماکے اور دہشت گردیسے اسلام کے تعلقکے حوالے سے سوالات اٹھائے گئے اورالزامات لگائے گئے۔ اسلام کا انتہا پسندی اور دہشت گردیسے تعلق موجودہ دورمیں نازک ہے۔ عالمی دہشت گردی کیبنیادی وجہ، اکثر سیاسی اور معاشی شکایات، بعض اوقات انتہاپسندوں کی طرف سےمذہبی زبان اور علامت کے استعمال سےچھپ جاتی ہیں۔قرآن - اسلام کامقدس کتاب قرآن، اسلام کا مقدس صحیفہ، پیغمبر اکرم (ص) پر مغربی عرب کے شہروں مکہ اور مدینہ میں نازل ہوا۔کلاسیکی عربی کی ابتدائی شکل میں مشتمل قرآنی نسخہ، روایتی طور پر خداکی تقریر کا لفظینقل مانا جاتا ہے۔قرآن اسلامی قانون کیبنیاد بناتا ہے اوربہت سی قانونی تفصیلات صحیفے کے ساتھساتھ نبی اکرم صلیاللہ علیہ وسلم سےمنسوب قول اور فعلسے اخذ کی گئیہیں۔ اسلامی روایت نےایک بھرپور اور نفیسادب تیار کیا ہے۔سب سے پہلے، تنگمعنی میں قرآنی تفسیر ہے، جو وقفشدہ تفسیروں پر مشتمل ہے جو صحیفے کے متن کواس کے قائم کردہترتیب کے مطابق، یاتو آیت بہ آیتیا قطعہ قطعہ۔ اسطرح کے ترجمے کو 'تفسیر' کہا جاتا ہے، جوصحیفہ کی تشریح کیسرگرمی کا لفظ بھیہے۔ دوسرا، قرآنی آیاتاور ان کی تفسیر دیگر ادبی اصناف میں بھی شاملہے، جیسے کہ قانونی اور نظریاتی گفتگو، جن کے مصنفین اکثر اپنے دعووں کو صحیفہ کےثبوت کے ذریعے ثابتکرتے ہیں۔ قدیم زمانے میں، قرآن کیاسلامی تفسیریں علمی مضامین کی مکمل تشریح کی روشنی میںصحیفے کے متن کیجانچ کرتی تھیں، خاصطور پر عربی گرامر، لغت اور بیانیہ کے شعبے تھے،جن میں نویں صدیسے بہت سی قرآنی تفسیریں ملتی تھیں۔ ایک واضح فلولوجیکل معیار کے بعد۔بہت سے پہلے کیجدید اسلامی تفسیر کیدوسری خصوصیت اس کارجحان ہے، جس کااوپر ذکر کیا جاچکا ہے، بہت سیآیات اور آیات کےجھرمٹ کو نبی اکرمصلی اللہ علیہ وسلمکی زندگی کے واقعات کے اضافی صحیفاتی بیانات کے ساتھجوڑنا ہے۔ تیسرا، اسطرح


قرآن کیاسلامی تفسیریں عام طورپر کسی آیت کیمتبادل وضاحت کا موازنہ اور وزن کرتیہیں، اس طرح یہتسلیم کرتی ہے کہبہت سے صحیفوں کیایک سے زیادہ قابلتعبیر تشریحات ہیں۔جدید اسلامی تفسیر عام طورپر مصر کی تفسیر سے شروع ہوتیہے جسے 'منار تفسیر' بھی کہاجاتا ہے۔ اس کامنے موجودہ دور میںبھی اخلاقی رہنمائی فراہم کرنے کے لیےقرآنی علم کی صلاحیت پر بہت زیادہ زور دیا ہے۔تازہ ترین تفسیر جوکہ وجود میں آئی1960 کیدہائی کے آخر میںحکمرانی کے ایک 'اسلامی نظام' کے انقلابی نفاذ کامطالبہ کیا گیا تھالیکن گہری ادبی حساسیت سے بھی ممتاز ہے۔قرآن کی غلطتشریح قرآن کے نزولپر مبنی تدریسی دورکا مطالعہ مواد کیاس کے ہدف کےمطابق ہونے کی بنیاد پر دلچسپ ہوجاتا ہے۔

110 views0 comments

Comments


Post: Blog2 Post
bottom of page